April 24, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/naturlens.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253

پاکستان کی ایک فوجی چوکی پر دہشت گردوں کے حملے پر اپنے ردِ عمل میں وائٹ ہاؤس اور امریکی محکمہ خارجہ نے دونوں جانب جانی نقصان پر افسوس کا اظہار کیا ہے

White House Press Secretary Karine Jean-Pierre

افغانستان کے اندر پاکستان کے فضائی حملوں اور اس سے پہلے ہفتے کے روز پاکستان کی ایک فوجی چوکی پر دہشت گردوں کے حملے پر اپنے ردِ عمل میں وائٹ ہاؤس اور امریکی محکمہ خارجہ نے دونوں جانب جانی نقصان پر افسوس کا اظہار کیا ہے اور دونوں ملکوں پر زور دیا ہے کہ وہ اپنے اختلافات بات چیت کے ذریعے طے کریں۔

وائٹ ہاؤس کی پریس سیکریٹری کیرین ژاں پئیر نے کہا، ہم ان خبروں سے آگاہ ہیں کہ ہفتے کے روز پاکستان میں ایک فوجی چوکی پر حملے کے جواب میں پاکستان نے افغانستان میں فضائی حملے کیے ہیں۔ ہم پاکستان کے اندر حملے میں لوگوں کے ہلاک اور زخمی ہونے پر، اور افغانستان میں فضائی حملے کے دوران سویلین ہلاکتوں پر گہرے افسوس کا اظہار کرتے ہیں۔

“ہم طالبان پر زور دیتے ہیں کہ وہ اس بات کو یقینی بنائیں کہ افغان سرزمین سے دہشت گرد حملے نہ کیے جائیں۔ ہم پاکستان پر زور دیتے ہیں کہ وہ ضبط سے کام لے اور یہ یقینی بنائے کہ اس کی انسدادِ دہشت گردی کی کارروائیوں میں عام شہریوں کو نقصان نہ پہنچے۔”

وائٹ ہاؤس کی پریس سیکریٹری نے افغانستان پر بھی زور دیا کہ وہ اپنی سرزمین کو دہشت گردوں کی پناہ گاہ نہ بننے دے۔

“ہم اس عزم پر قائم ہیں کہ اسے یقینی بنایا جائے کہ افغانستان دوبارہ کبھی بھی دہشت گردوں کی پناہ گاہ نہ بنےجو امریکہ یا اسکے شراکت داروں اور اتحادیوں کو نقصان پہنچا نا چاہتے ہیں۔”

امریکہ کے محکمہ خارجہ نے کہا تھا کہ امریکہ ان رپورٹس سے آگاہ ہے کہ پاکستان نے، خیبر پختونخواہ میں ہفتے کے روز ایک فوجی چوکی پر حملے کے جواب میں افغانستان میں فضائی حملہ کیا ہے۔

ویدانت پٹیل

ویدانت پٹیل

ویدانت پٹیل نے پیر کے روز محکمے کی بریفنگ میں بھی پاکستان کی افغانستان کے اندر اہداف پر فضائی کاروائی سے متعلق صحافیوں کے سوالات کے جواب دیے۔ اور اس بات پر زور دیا کہ دنوں پڑوسی ملک اپنے اختلافات بات چیت کے ذریعے حل کریں۔

ان کا کہنا تھا کہ ہم اس بات کو یقینی بنانے کے لیے پرعزم ہیں کہ افغانستان دوبارہ کبھی بھی ان دہشت گردوں کی محفوظ پناہ گاہ نہ بنے جو امریکہ یا ہمارے شراکت داروں یا اتحادیوں کو نقصان پہنچانا چاہتے ہیں۔

ویدانت پیٹل نے بریفنگ میں مزید کہا’’پاکستانی عوام نے کئی دہائیوں سے دہشت گردوں کے ہاتھوں بہت نقصان اٹھایا ہے۔ ہم پاکستانی رہنماؤں کے ساتھ افغانستان کے بارے میں تفصیلی بات چیت کے لیے باقاعدگی سے رابطے میں ہیں، جن میں ہمارے انسداد دہشت گردی کے مذاکرات اور دیگر دو طرفہ مشاورت شامل ہے۔ “

ان کا کہنا تھا ہم پورے خطے میں دہشت گرد گروہوں کی طرف سے لاحق مشترکہ خطرے سے نمٹنے کے لیے پاکستان کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے پرعزم ہیں اور دہشت گردی سے نمٹنے کے لیے حکومت پاکستان کی کوششوں کی حمایت کرتے ہیں جس سے قانون کی حکمرانی اور انسانی حقوق کے تحفظ کو فروغ ملے۔

پٹیل نے کہا: “کسی بھی صورت میں شہری ہلاکتیں ہمارے لیے تشویش ناک ہیں۔ اور اس لیے ہم اس بات کو یقینی بنانا چاہتے ہیں کہ جب فوجی آپریشن کیا جائے تو ہر ممکن اقدامات اٹھائے جائیں کہ مجرموں کا تو احتساب ہو لیکن بے گناہ شہری اس کا نشانہ نہ بنیں۔”

انہوں نے قانون کی بالادستی اور انسانی حقوق کی پاسداری پر زور دیتے ہو ئے کہا کہ ہم پورے خطے میں دہشت گرد گروہوں کی طرف سے لاحق مشترکہ خطرے سے نمٹنے کے لیے پاکستان کے ساتھ مل کر کام کرنے کے لیے پرعزم ہیں اور دہشت گردی سے نمٹنے کے لیے حکومت پاکستان کی کوششوں کی حمایت کرتے ہیں جس سے قانون کی حکمرانی اور انسانی حقوق کے تحفظ کو فروغ ملے۔

ویدانت پٹیل کا کہنا تھا،”پاکستان ایک اہم اور کلیدی شراکت دار ہے، ہم اپنے انسداد دہشت گردی کے ڈائیلاگ اور دیگر مشترکہ سیکورٹی ترجیحات پر بات کرنے کے لیے، اس کے ساتھ باقاعدگی سے رابطے میں رہتے ہیں۔”

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *